Imran Shanawar | Urdu Poetry | عمران شناور

36 4

عمران شناور۔
لاہور۔پاکستان
0321-4740421

غزل
انجان لگ رہا ہے مرے غم سے گھر تمام
حالانکہ میرے اپنے ہیں دیوار و در تمام
صیّاد سے قفس میں بھی کوئی گلہ نہیں
میں نے خود اپنے ہاتھ سے کاٹے ہیں پَر تمام
کب سے بلا رہا ہوں مدد کے لیے انہیں
کس سوچ میں پڑے ہیں مرے چارہ گر تمام
جتنے بھی معتبر تھے وہ نامعتبر ہوئے
رہزن بنے ہوئے ہیں یہاں راہبر تمام
دل سے نہ جائے وہم تو کچھ فائدہ نہیں
ہوتے نہیں ہیں شکوے گلے عمر بھر تمام
غزل
ستارے سب مرے‘ مہتاب میرے
ابھی مت ٹوٹنا اے خواب! میرے
ابھی اڑنا ہے مجھ کو آسماں تک
ہوئے جاتے ہیں پَر بے تاب میرے
میں تھک کر گر گیا‘ ٹوٹا نہیں ہوں
بہت مضبوط ہیں اعصاب میرے
ترے آنے پہ بھی بادِ بہاری
گلستاں کیوں نہیں شاداب میرے
بہت ہی شاد رہتا تھا میں جن میں
وہ لمحے ہو گئے نایاب میرے
ابھی آنکھوں میں طغیانی نہیں ہے
ابھی آئے نہیں سیلاب میرے
سمندر میں ہوا طوفان برپا
سفینے آئے زیرِ آب میرے
تو اب کے بھی نہیں ڈوبا شناورؔ
بہت حیران ہیں احباب میرے
غزل
ہو رہا ہے کیا یہاں کچھ عقدۂ محشر کھلے
اب فصیلِ تیرگی میں روشنی کا در کھلے
بزمِ یاراں سج گئی ہے بس یہی ارمان ہے
کوئی تو ساحر ہو ایسا جس پہ وہ ازور کھلے
’کتنا اچھا دور تھا‘ ہم نے بزرگوں سے سنا
چھوڑ کر جاتے تھے جب ہم اپنے اپنے گھر کھلے
سوچتے تھے زندگی میں اب کوئی مشکل نہیں
ایک کا حل مل گیا تو مسئلے دیگر کھلے
تو مری شہ رگ کے اتنا پاس کیسے ہوگیا
’’سوچنے بیٹھا تجھے تو کیسے کیسے در کھلے‘‘
ڈوب کر بحرِ سخن میں جب شناور ہوگیا
ایک پل میں زندگی کے کتنے ہی جوہر کھلے
غزل
راز کی بات کوئی کیا جانے
میرے جذبات کوئی کیا جانے
میرے حصے میں ہجر آیا ہے
ہجر کی رات کوئی کیا جانے
روز ہوتی ہے گفتگو تجھ سے
یہ ملاقات کوئی کیا جانے
کس قدر ٹوٹ پھوٹ ہے مجھ میں
میرے حالات کوئی کیا جانے
بے سبب خود سے دشمنی کر لی
یہ مری مات کوئی کیا جانے
غزل
کچھ تو اے یار! علاجِ غمِ تنہائی ہو
بات اتنی بھی نہ بڑھ جائے کہ رسوائی ہو
ڈوبنے والے تو آنکھوں سے بھی کب نکلے ہیں
ڈوبنے کے لیے لازم نہیں، گہرائی ہو
جس نے بھی مجھ کو تماشا سا بنا رکھا ہے
اب ضروری ہے وہی آنکھ تماشائی ہو
میں محبت میں لٹا بیٹھا ہوں دل کی دنیا
کام یہ ایسا بھی کب ہے کہ پذیرائی ہو
کوئی انجان نہ ہو شہرِ محبت کا مکیں
کاش ہر دل کی ہر اک دل سے شناسائی ہو
آج تو بزم میں ہر آنکھ تھی پرنم جیسے
داستاں میری کسی نے یہاں دہرائی ہو
میں تجھے جیت بھی تحفے میں نہیں دے سکتا
چاہتا یہ بھی نہیں ہوں تری پسپائی ہو
یوں گزر جاتا ہے عمرانؔ ترے کوچے سے
تیرا واقف نہ ہو جیسے کوئی سودائی ہو
غزل
میں ہوں مجنوں مرا انداز زمانے والا
تیری نگری میں تو پتھر نہیں کھانے والا
تو نے دیکھا ہی نہیں ساتھ مرے چل کے کبھی
میں ہوں تنہائی کا بھی ساتھ نبھانے والا
مجھ کو تم دشتِ تحیّر میں نہ چھوڑو تنہا
خوف طاری ہے عجب دل کو ڈرانے والا
خوف آتا ہے مجھے اپنی ہی تنہائی سے
روٹھ جاتا ہے کوئی مجھ کو منانے والا
دل وہ شیشہ کہ ترا عکس لیے پھرتا ہے
روز آتا ہے کوئی اس کو مٹانے والا!
اس کی ہر بات سر آنکھوں پہ لیے پھرتا ہوں
مجھ کو اچھا بھی تو لگتا ہے رُلانے والا
اس قدر اجنبی انداز سے کیوں دیکھتا ہے
میں وہی ہوں ترا کردار فسانے والا
ہر قدم سوچ سمجھ کر ہی اٹھانا اے دل
تیرا رہبر تو نہیں، راہ بتانے والا
ہے اگر کچھ تو بتا دے گا زمانے بھر کو
وہ نہیں درد کو سینے میں چھپانے والا
چاہے جتنی بھی سفارش کرو اُس کی عمرانؔ
میں تری باتوں میں ہرگز نہیں آنے والا
غزل
پتھروں سے واسطہ ہونا ہی تھا
دل شکستہ آئنہ ہونا ہی تھا
میں بھی اس کو پوجتا تھا رات دن
آخر اس بت کو خدا ہونا ہی تھا
مسندوں پر ہو گئے قابض یزید
اس نگر کو کربلا ہونا ہی تھا
تیرا چہرہ جب نہیں تھا سامنے
آئنوں کو بے صدا ہونا ہی تھا
آج کل سنسان ہے دل کا نگر
عشق میں یہ سانحہ ہونا ہی تھا
بولتا عمران جب کوئی نہیں
خامشی کو تو صدا ہونا ہی تھا
غزل
جو تری قربتوں کو پاتا ہے
اس کو مرنے میں لطف آتا ہے
میں جسے آشنا سمجھتا ہوں
دور بیٹھا وہ مسکراتا ہے
میں تو ممنون ہوں زمانے کا
سیکھ لیتا ہوں جو سکھاتا ہے
تیرگی دربدر ہے گلیوں میں
دیکھیے کون گھر جلاتا ہے
میں ہی سنتا نہیں صدا اس کی
روز کوئی مجھے بلاتا ہے
تو نے منزل تو دیکھ لی عمران
اب تجھے راستہ بلاتا ہے
غزل
لو پہن لی پاؤں میں زنجیر اب
اور کیا دکھلائے گی تقدیر اب
خود ہی چل کر آ گیا زندان تک
کیا کرو گے خواب کی تعبیر اب
اے مسیحا جو تری باتوں میں تھی
دل تلک پہنچی ہے وہ تاثیر اب
ہائے‘ اک آہٹ نے پھر چونکا دیا
بولنے والی تھی وہ تصویر اب
سیدھا میرے دل ہی پر آ کر لگے
آخری ترکش میں ہے جو تیر اب
تیرگی تو مار ڈالے گی مجھے
ڈھونڈ کر لا دے کوئی تنویر اب
اور کچھ پانے حسرت ہی نہیں
مل گئی ہے پیار کی جاگیر اب
شناور
خلا میں غور سے دیکھوں تو اک تصویر بنتی ہے
اور اس تصویر کا چہرہ ترے چہرے سے ملتا ہے
وہی آنکھیں‘ وہی رنگت
وہی ہیں خال و خد سارے
مری آنکھوں سے دیکھے تو تجھے اس عکس کے چہرے پہ
اک تل بھی دکھائی دے
جو بالکل تیرے چہرے پر سجے اس تل کے جیسا ہے
جو گہرا ہے ‘بہت گہرا
سمندر سے بھی گہرا ہے
کہ اس گہرائی میں اکثر
شناور ڈوب جاتا ہے
غزل
بھولتا ہوں اسے یاد آئے مگر، بول میں کیا کروں
جینے دیتی نہیں اس کی پہلی نظر، بول میں کیا کروں
تیرگی خوب ہے، کوئی ہمدم نہیں، کوئی رہبر نہیں
مجھ کو درپیش ہے ایک لمبا سفر، بول میں کیا کروں
خود سے ہی بھاگ کر میں کہاں جاؤں گا یونہی مر جاؤں گا
کوئی صورت بھی آتی نہیں اب نظر، بول میں کیا کروں
میری تنہائی نے مجھ کو رسوا کیا، گھر بھی زندان ہے
مجھ پہ ہنسنے لگے اب تو دیوار و در، بول میں کیا کروں
اُڑ بھی سکتا نہیں، آگ ایسی لگی، کس کو الزام دوں
دھیرے دھیرے جلے ہیں مرے بال و پر، بول میں کیا کروں
تو مرا ہو گیا، میں ترا ہو گیا، اب کوئی غم نہیں
پھر بھی دل میں بچھڑنے کا رہتا ہے ڈر، بول میں کیا کروں
غزل
کیا محسوس کیا تھا تم نے میرے یار درختو
تنہائی جب ملنے آئی پہلی بار درختو
ہر شب تم سے ملنے آ جاتی ہے تنہا تنہا
کیا تم بھی کرتے ہو تنہائی سے پیار درختو
تنہائی میں بیٹھے بیٹھے اکثر سوچتا ہوں میں
کون تمہارا دلبر، کس کے تم دلدار درختو
لڑتے رہتے ہو تم اکثر تند و تیز ہوا سے
تم بھی تھک کر مان ہی لیتے ہو گے ہار درختو
اب کے سال بھی پت جھڑ آئے گا یہ ذہن میں رکھو
اتنا خود پہ کیا اِترانا سایہ دار درختو
میں جب اپنے حق میں بولوں تم ناراض نہ ہونا
غیروں سے ہمدردی کرنا ہے بیکار درختو

36 Comments
  1. Asif Shafi says

    عمران شناور کی غزلیں تازہ ہوا کے جھونکے کی مانند ہیں۔ اس کی شاعری میں وہ تمام امکانات موجود ہیں جو مستقبل میں ہماری اردو کو پروان چڑھانے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ میں اس کے بہتر مستقبل کے لیے دعا گو ہوں۔

  2. Ahtasham Jamil Shami says

    Imran shannawar ke kalam main itni pukhtagi hay ke aqal dhang rah jati hay ke itni si umar main itni umda shairi…..Asal main imran ke ird gird shairana mahool hay,Baqi Ahmad puri,Sadullah shah,Sarwar Arman,Asif shafi,Hassan Abbasi jaise aala pay ke shora ne bi Imran ke kalam ko pasand kia hay,Imran jitna bara shayar hay us se kahin bara Insan hay,Imran se dosti aik arsa se hay,main ne imran ke sath bohat arsa kam bi kia hay,wo farmanbardar aur moaadab hay,kisi ne khub he kaha hay ke hamesha Phal jhuke hoay paair ko he lagta hay,so Imran ab us jukhe hoay paair se tanawar darakh ban gya hay,Lekin aajzi abhi bi us ke andar mojood hay.Well done mere bhai……Keep it up.
    Ahtasham Jamil Shami
    Chief Editor: Weekly Gird-O-Nawah Okara.
    0321-6972002

  3. waqar ali says

    allah imran bhai ko us maqam tak le kr jae jis k liye unhu ne itni mehnat ki or kr rhe hain aur ye mustaqbil me aik ache sheir ho ge

  4. Shahid Jarra says

    Very nice poetry , Imran Shanawar has all the qualities of a good Poet , Wish you all the best , you have bright future in this field.

  5. M.shoaib mirza says

    imran bhai
    boht khoob
    ALLAH kare zore qalam aor zyada
    shoaib mirza

  6. Shahid Jarra Advocate High Court says

    keep it up dear , We enjoy your poetry.

  7. Muntazir Qaimi says

    Ek noumr naujawan ki itni baseeratafroz ghazlen padh kr badi farhat ka ehsas hua. Aisi khushfikr shayeri mustaqbil me kisi azeem shayree ki aamad ki ahat mahsus ki jasakti hi.
    is me faraz, faiz, jalib jaise bakamal shora ka rang bhi mahsus kiya ja skta hi mghar khane wale ka apna ek nirala traz hi…..Allah kare zor e qalam aur ziyada.

  8. BAQI AHMED PURI says

    Imran Shanawar is a promising young poet and he is writing very nice poetry especially GHAZAL .Allah karey zore qalam aur zeyada BAQI

  9. Shakeel sarosh says

    Bohat khoobsoorat sherry hay. Aap ko bay Panah dad.

  10. TANVEER AHMAD says

    IMRAN BHAI YOUR POETRY IS VERY GOOD . YOUR THINK IS VERY GOOD .

  11. saghir says

    ءمران بہت اءلی۔۔۔۔ بہت پسند آئی ہیں غزلیں۔اللہ ءزت دے

  12. Rafiq says

    bahut khoob Allah ap ko Aur tarqi dai.

  13. ayub sabir says

    bohat umda kalam hy…… mani khaiz ghalain hain….. aasan zuban main gharahe posheeda hy…… parh ker sarur aa gia….. is main rawayat k sath jiddat b hy….. salamat rahain….

  14. nadeem says

    bohat acha klaam
    mehnat jari rakhiye
    aap mein shairi ki tamam salahiyatein hein mashallah

  15. nadeem says

    classic

  16. Mukhtar Ali says

    achy imkanat hen ap ki shairi men .. tapassia or mushaqqt magar in imkanat ko behtar nataij men dhal sakti hy .. or is ky liye musalsal mutalia, mukalima or mushahida darkar hy or be panah waqt bhi .. in sab awamil ki aaj kal kami hoti ja rahi hy .. magar hamen pur ummed to rehna ho ga ?

  17. SYED ANSER says

    shanawar sb aap ka kalaam aik arsa se parh raha hoon magar aaj aap k kalaam mein jo imran shanawar dekh raha hoon yeh hairat zada karne wala shayir hai…yaqeen karain aap k kalaam mein kafi pukhtagi aur nikhaar aa chuka hai ….subhanaLLAH…JEETE RAHIYE

  18. hassan raza says

    waa buhat khoub imran sab…aap ki ghazals padhi….waisy tu tammam hi ghazals aachi hen,,,,lakin aik do ghazals kafi acchi hen,,,,isi tara lekhtay rahen,,,inshallaha aor nekhar aa jay ga,,,,,daad qabal kigiya,,,,,salamat rahen,,,,,,

  19. umair bin saad says

    marvelous……………… undebatable

  20. RANA JAWAID IQBAL says

    wah, wah…. bohat khubsoorat ghazliyaat kahi hain aapne…. dehron daad qabool farmaiye…

  21. SwS,ATS' says

    Aaslam-O-Alaikum!
    It’s too good dear..

  22. hassan says

    wah achi poetry hai really

  23. agha nisar says

    imran i enjoy your poetrt

  24. saleem fauz says

    nehayat umda poetry parrhney ko mili thanx imran shanawar.

  25. nida azeemi says

    very nice poetry

  26. Hafiz Muzaffar Mohsin says

    khush karditaajey

  27. masood tanha says

    Azizam! A.A!
    Bahut umda ghazalein hain,Allah kry zor-e- qalam aur ziada.

  28. Sarwar Arman says

    imran shanawar ki shaairy jamaleyati qadroan ka tahaffuz aur ehd-e-haazar k taqazoan par poora utarti hui dil-aavez aur maahirana peshkash hay jis k leay woh be-panah dad-o-tehseen k sazawar hain. mujhay yaqeen hay yeh safar ruknay wala naheen.

  29. tariq shahzad says

    shanawar sahib ahd e hazer k nomaaenda shaaer hein,,aap ki shaaery mein rawaety aur jadeed donoon rung nomaayan hein,,kalam mein tazgi aur trawat hy,hamesha nye aur achoty khialat sy mozzayan ghazal likhty hein,bar bar parrny ko ji chahta hy,,,allah izzat mein mazeed izafa kry,,aameen

    1. indira poonawala.indira shabnam indu says

      sight bahut he infomative hai shandar imran shanwar ji ko mubarkeen.poora sight.web khoob hai dhaywad.indira

  30. indira poonawala.indira shabnam indu says

    jo gahra hai.bahoot gahira.samnder se bhi ghra hai.k us gharaee mein aksar.shanawar doob jata hai.

  31. Ward Bazmi says

    میں تھک کر گر گیا‘ ٹوٹا نہیں ہوں
    بہت مضبوط ہیں اعصاب میرے
    سبحان اللہ
    کیا خوب غزل ہے
    بہت سی داد اور دعا
    سلامت رہیے

  32. Nusrat Naseem says

    anjan lg raha hai mere ghum sy ghar tamam,,,aur patharon sy wasta hona hi tha ,,,zabadast ,,,,,,buht c baad qubool kijy,,,ess qade khobsorat kalam share krny pe,,,

  33. sayed kami shah says

    buhat khoob shanawar…. buhat umda kalam hai…. mashaAllah… Allah saien dher izzat de…

  34. amin shad says

    jeete rho.buhut khoob…

  35. Akhtar Hussain Sandhu says

    nice poetry…. very depth I have found in the poetry of Shanawar

Leave A Reply

Your email address will not be published.